صوبائی حکومت جھوٹے اعلانات اور من گھڑت بیانات کے علاوہ کچھ نہیں کرسکی،شہزادآغا

12345-260.jpg

گلگت(سپیشل رپورٹر)رہنما پیپلز پارٹی وممبر گلگت بلتستان اسمبلی غلام شہزاد آغا نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت جھوٹے اعلانات اور من گھڑت بیانات کے علاوہ کچھ نہیں کررہا ہے۔گلگت بلتستان کیعوام کو اس وقت سڑا ہوا گندم کھلا کر گلگت بلتستان بھر کے عوام کو مریض بنایا ہے۔ادھر صوبائی وزرا پنجاب حکومت کی طرف سے جی بی کو گندم کی سپلائی کی نوید سناتے ہوئے ایک سال بید گئے لیکن ابھی تک یوکرائن کے گھوڑوں کو کھلانے والا گندم یہاں کے عوام کو کھلایا جا رہا ہے۔انہوں نے مزید کہا ہے کہ سلیکٹیڈ حکومت پاکستان کے بہترین گندم غیر ملکوں میں بلیک کر کے یوکرائن کے گلاسڑا گندم عوام کو دے رہا ہے اسی طرح گلگت بلتستان کے کوٹے سے ماہانہ 26ہزار بوری کی بلیک مارکیٹنگ کی وجہ سے گندم اور آٹے کی کوٹے میں کمی لا کر غریب عوام سے مزید امتحان لے رہا ہے۔گندم کی بلیک مارکیٹنگ میں صوبائی وزیر ملوث ہے۔گلگت بلتستان کے گندم افغانستان بلیک کر کے وزیر موصوف اسلام آباد میں کوٹھیاں لے رہی ہے۔اگر صوبائی حکومت فوری طور پر اپنے روش میں تبدیلی نہ لائے اور عوامی حقوق پر شب وخون مارنا ترک نہ کرے تو عوام ان وزرا کی اینٹ سے اینٹ بجا کے رکھ دیں گے۔انہوں نے کہا کہ حکومت عوام کو لوڈشیڈنگ سے نجات دلانے میں مکمل ناکام ہو گئے۔ایک سال سے جنریٹر کا واویلا کرنے والے وزرا اب بلی بند کے بیٹھے ہے۔ اس وقت وہ جنریٹر عوام کو بجلی نہیں بلکہ دھواں کی سپلائی دے رہا ہے۔انہوں نے سکردو کے منتخب نمائندے پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ انہیں جھوٹ بولنے سے فرصت نہیں ۔جھوٹے بیانات انکا شیوہ ہے۔عوام کو گمراہ کرنے کے علاوہ کوئی کام نہیں۔ترقیاتی دعویداروں سے ایک سال بعد بھی ایک پیسے کا کام نہیں ہوا زبانی جمع خرچ کے علاوہ کوئی عملی اقدامات نظر نہیں آ رہا ہے حکومت نامی کوئی چیز نہیں۔وزیر اعلی ون مین شو ہے بلتستان کے وزرا کو مزاق کر کے ٹرخایا جاتا ہے۔پالیسی اور فیصلوں میں انہیں ہوا تک لگنے نہیں دیتا۔حکومت کے ان نا اہلی اور عوام دشمن پالیسیوں کے خلاف 20کے بعد پیپلز پارٹی قیام کریگی۔

شیئر کریں

Top