سٹیٹ بینک کی تازہ رپورٹ نے معاشی استحکام کے جھوٹے دعووں کی قلعی کھول دی ہے:جاوید قصوری

لاہور:امیرجماعت اسلامی صوبہ وسطی پنجاب و صدر ملی یکجہتی کونسل پنجاب وسطی محمد جاوید قصوری نے کہا ہے کہ سٹیٹ بینک کی تازہ رپورٹ جس میں انکشاف کیا گیا ہے کہ” مہنگائی7سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ چکی ہے۔

جی ڈی پی کی نموکا ہدف حاصل کرنا بھی ممکن نہیں” اس بات کا ثبوت ہے کہ حکمر انوں کے معیشت میں بہتری کے تمام دعوے محض جھوٹے اور عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش ہے۔ کسی بھی شعبے میں معاشی استحکام نظر نہیں آرہا ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں گزشتہ روزلاہور میں مختلف تقریبات سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ جنوبی ایشیا ئی خطے میں پاکستان کی معاشی صورت حال ، بنگلہ دیش اور بھارت اور دیگر ممالک سے بھی مسابقت کے قابل نہیں رہی۔ تحریک انصاف کی تبدیلی کھوکھلی ثابت ہوئی ہے۔ عوام کو کسی بھی قسم کا کوئی ریلیف نہیں ۔ سونا مہنگا ہو کر 93ہزار چار سو فی تولہ اور پٹرولیم مصنوعات کے نر خوں میں ہوشربا اضافہ ہو چکا ہے۔

حکومت اخباری اور ٹویٹر بیانات پر چل رہی ہے۔ عملاً ملک میں حکومت نام کی کوئی چیز نہیں۔ انہوں نے کہا ہے کہ وظیفہ بند ہونے سے بھٹہ مزدورں کے 30ہزار بچے اسکول چھوڑ چکے ۔ملک میں لاکھوں افراد بے روزگار ہو کر بیرون ملک جاچکے ہیں۔ صنعتیں بند اور سرمایہ کار پاکستان آنے کو تیار نہیں ہیں۔ نااہل اور ناتجربہ کار لوگ ملک چلانے کے قابل نہیں۔

وسائل سے مالامال پاکستان گھمبیر صورتحال پیش کررہا ہے۔ سردی کی لہر میں اضافے کے ساتھ ہی گیس ہی ناپید ہوگئی ہے۔ گھروں کے چولہے ٹھنڈے ہوگئے ہیں۔ عوام سوال پوچھتے ہیں کہ حکمرانوں کے وافر گیس کے دعوے کہاں گئے ؟۔ محمد جاوید قصوری نے اس حوالے سے مزید کہا کہ موجودہ حکمران خارجی اور داخلی دونوں امور پر بری طرح ناکام ہوچکے ہیں۔ بچگانہ اور سطحی سوچ کے ساتھ معاملات کو دیکھنا اور حل کرنے کی کوشش ناصر ف ملک و قوم کے ساتھ زیادتی ہے بلکہ حالات اس سے زیادہ سنگیں ہوتے جارہے ہیں۔ حکمران لوگوں کو عارضی پناہ گاہیں اور لنگر خانے دینے کی بجائے پچاس لاکھ گھر اور ایک کروڑ نوکریاں دیں۔

شیئر کریں

Top