صدر ٹرمپ میں کرونا کی علامات والٹرریڈ ملٹری ہسپتال منتقل

111531-728871962.jpg

ٹرمپ اور ان کی اہلیہ کے کرونا نتائج اس وقت سامنے آئے جب صدر کی قریبی مشیر ہوپ ہکس میں کرونا کی تشخیص ہوئی تھی
واشنگٹن (یواین پی) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ میں کرونا وائرس کی تشخیص کے بعد انہیں واشنگٹن کے باہر واقع والٹر ریڈ ملٹری ہسپتال میں داخل کر دیا گیا ہے۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق صدر ٹرمپ اور ان کی اہلیہ کے کرونا نتائج اس وقت سامنے آئے جب صدر کی قریبی مشیر ہوپ ہکس میں جمعرات کو کرونا کی تشخیص ہوئی تھی۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق ٹرمپ کووائٹ ہاؤس سے ہیلی کاپٹر کے ذریعے واشنگٹن کے باہر واقع والٹر ریڈ ملٹری ہسپتال منتقل کیا گیا۔اس موقعے پر انہوں نے سوٹ اور ماسک پہن رکھا تھا۔ہسپتال منتقلی سے پہلے وائٹ ہاؤس میں ریکارڈ 18 سیکنڈ کی ویڈیو میں صدر ٹرمپ نے اس مرض پر اپنی خاموشی توڑتے ہوئے کہا کہ انہیں ہسپتال میں داخل کرایا جا رہا ہے لیکن ’مجھے لگتا ہے کہ میری طبعیت ٹھیک ہے۔‘ٹوئٹر پر جاری کی گئی اس ویڈیو میں انہوں نے (باقی صفحہ 6بقیہ نمبر13)
مزید کہا کہ ’ہم اس بات کو یقینی بنانے جا رہے ہیں کہ چیزیں قابو میں رہیں۔‘ انہوں نے کہا کہ خاتون اول بھی بہتر محسوس کر رہی ہیں۔پریس سکریٹری کیلیگ میکینی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ طبی ماہرین نے ٹرمپ کو اگلے کچھ دن والٹر ریڈ ہسپتال میں عارضی طور پر قائم صدارتی کیمپ سے کام کرنے کی سفارش کی ہے۔اس پیش رفت نے تین نومبر کو امریکی انتخابات پر سوالیہ نشان لگا دیے ہیں کیوں کہ ریپبلکن امیدوار اب شاید ہی مہم میں حصہ لے پائیں۔ جو بائیڈن کو پہلے ہی کچھ سروے میں ٹرمپ پر برتری حاصل تھی۔دوسری جانب ماہرین کا کہنا ہے صدر ٹرمپ کو ہسپتال میں اس لیے داخل کرایا گیا ہے کیونکہ ان میں کرونا کی ہلکی علامتیں بگڑنے کا خدشہ ہے۔ رپورٹ کے مطابق 74 سالہ صدر ٹرمپ کو اس وائرس سے زیادہ خطرہ ہے کیونکہ ان کی عمر زیادہ ہے اور ان کا وزن بھی زیادہ سمجھا جاتا ہے۔صدارت کے دوران ان کی صحت اچھی رہی ہے تاہم وہ صحت مند غذا نہیں لیتے اور نہ ہی ورزش کرتے ہیں۔اگرچہ ڈونلڈ ٹرمپ کے چیف آف سٹاف مارک میڈو نے کہا کہ صدر میں کرونا کی صرف معمولی علامات ظاہر ہوئی ہیں اور وہ بلند حوصلہ اور ہمت کا مظاہرہ کر رہے تھے۔
منتقل

شیئر کریں

Top