گلگت بلتستان کیخلاف قوم ہرست جماعتوں کا احتجاج آزاد کشمیر کے تین اضلاع کے راستے بند 3کارکن گرفتار باغ میں جہالہ پل پر پڑاؤ

JKNSF-Logo.jpg

آزاد کشمیر حکومت کی جانب سے کوہالہ پل کو رکاوٹیں کھڑی کر کے ٹریفک کیلئے بند کر دیا گیا ،گاڑیوں کی لمبی قطاریں لگ گئیں،مسافروں کو مشکلات کا سامنا کر نا پڑا
ریاست کی وحدت بچانے کیلئے نکلے ، ہم پل پر بیٹھ کر احتجاج ریکارڈ کرانا چاہتے تھے حکومت نے راستے بند کر دیئے، قوم پرست رہنما لیاقت حیات کی میڈیا سے گفتگو
ارجہ (خصوصی رپورٹ)گلگت بلتستان کو صوبہ بنانے کے منصوبے کو عملی شکل دینے کی کوشش کے خلاف جموں کشمیر نیشنل عوامی پارٹی، جموں کشمیر نیشنل سٹوڈنٹس فیڈریشن کا کوہالہ پل دھرنے کا پروگرام انتظامیہ نے رکاوٹیں کھڑی کرکے ناکام بنا دیا،مظفرآباد میں جموں کشمیر نیشنل عوامی پارٹی کے مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل راجہ امین، این ایس ایف کے مرکزی رہنما بلال خان، مجتبی حسین، ارسلان خان اور دیگر تین ساتھی گرفتار پونچھ باع سے دھرنا دینے کوہالہ جانے والوں کا جہالہ پل پر رات کو پڑا، نیپ کے مرکزی صدر سردار لیاقت حیات کا انتظامیہ کو جہالہ پل سے رکاوٹیں ہٹانے کا الٹی میٹم،قبل ازیں ارجہ میں(باقی صفحہ 7بقیہ نمبر24)
ریلی سے خطاب کرتے ہوئے سردار لیاقت حیات نے کہا کہ ہم کوہالہ پل توڑنے نہیں، ریاست کی وحدت بچانے کے لیے سڑکوں پر نکلے ہیں ہم ایک پل پر بیٹھ کر احتجاج ریکارڈ کروانا چاہتے تھے حکومت نے تین اضلاع کے راستے بند کر دیئے انہوں نے کہا کہ ، مودی نیازی گٹھ جوڑ بے نقاب ہو گیا، ہیریاست جموں کشمیر ہماری ماں ہے اس کا بٹوارہ نہیں ہونے دیں گے، وطن سے محبت کا درس ہمارا مذہب بھی دیتا ہے، یہ ریاست ہماری جنت ہے، تقسیم یابٹواریکیخلاف آخری حد تک جائیں گے، انہوں نے کہا کہ جب تک ایک بھی غیرت مند کشمیری زندہ ہے تقسیم کشمیر کا منصوبہ مکمل نہیں ہونے دیں گے، لیاقت حیات نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ انتظامیہ کی طرف سیژ رکاوٹ کی وجہ سے فی الحال ہم نے ارجہ کے قریب جہالہ پل پر ہی دھرنا دے رکھا مستقبل کے لائحہ عمل طے کرنے کے بعد اس کا اعلان کیا جائے گا۔
دھرنا

شیئر کریں

Top