نواز شریف بیمار ہوتے تو 9ماہ میں کسی دن ہسپتال جاتے یاسمین راشد

784241_1008346_Dr-yasmin-Rashid_updates.jpg

نواز شریف ہسپتال داخل نہیں ہوئے تو اسکا مطلب ہے کہ وہ ٹھیک ہیں، سابق وزیراعظم نے دل کا علاج کروانا تھا انہوں نے نہیں کروایا
ہم نے نواز شریف کا جو علاج کیا اسکے نتائج سامنے آنے میں 8 ہفتے لگتے ہیں،جب وہ لندن پہنچے تو ان کی طبیعت میں بہت بہتری آچکی
لاہور(آئی ا ین پی ) وزیر صحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد نے کہا ہے کہ سابق وزیر اعظم نوازشریف کی طبیعت اگر ٹھیک نہ ہوتی تو وہ 9 ماہ میں کسی دن تو اسپتال جاتے۔میڈیا سے گفتگو کے دوران ڈاکٹر یاسمین راشد نے کہا کہ نواز شریف اسپتال داخل نہیں ہوئے تو اس کا مطلب ہے کہ و(باقی صفحہ6بقیہ نمبر54)
ہ ٹھیک ہیں۔ صوبائی وزیر صحت نے کہا کہ نواز شریف جب ہمارے پاس آئے تھے تو ان کا پلیٹ لیٹس کاونٹ بہت کم تھا۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے نواز شریف کا جو علاج کیا اس کے نتائج سامنے آنے میں 8 ہفتے لگتے ہیں،جب وہ لندن پہنچے تو ان کی طبیعت میں بہت بہتری آچکی تھی۔ وزیر صحت پنجاب کا کہنا تھا کہ نوازشریف نے اپنے دل کا علاج کروانا تھا وہ انہوں نے نہیں کروایا۔
یاسمین راشد

شیئر کریں

Top