نگران وزیر قانون کا مصنوعی ذہانت کے قومی مرکز کا دورہ چےئر مین کی بریفنگ

1-1.png

ڈاکٹر یاسر اور ٹیم نے جی بی کیلئے تحقیقاتی ، محصولات کے ریکارڈ کو ڈیجیٹلائزیشن کرنے کیلئے اپنی خدمات فراہم کرنے میں دلچسپی ظاہر کی
گلگت بلتستان حکومت اس سمت پہلا اور اہم قدم اٹھائے اور اپنے مستقبل کیلئے اے آئی میں سرمایہ کاری شروع کرے،ڈاکٹر یاسر
اسلام آباد(بادشمال نیوز)نگران وزیر قانون یسین ایڈووکیٹ نے مصنوعی ذہانت کے قومی مرکز این سی اے آئی سیکرٹریٹ اسلام آباد کا دورہ کیا جہاں نامور سائنسدان ڈاکٹر سے ملاقات کی۔ این سی اے آئی کے سنٹرل پروجیکٹ ڈائریکٹر و چیئرمین ڈاکٹر یاسر نے نگران وزیر کو این سی اے (باقی صفحہ7بقیہ نمبر3)
آئی کی طرف سے شروع کردہ اے آئی سے متعلق جدید ترین تکنیکی اقدامات اور پروجیکٹس کے بارے میں بریف کیا ، خاص طور پر سپریم کورٹ آف پاکستان یعنی نیشنل جوڈیشل آٹومیشن یونٹ کے قیام اور پاکستان میں اے آئی کے مستقبل کے اس منصوبے کے بارے میں بتایا۔ اس موقع پر یسین ایڈووکیٹ نے بتایا کہ مصنوعی ذہانت کے قومی مرکز آکر نہایت خوشی ہو رہی ہے، یہاں بلتستان سے تعلق رکھنے والے محمد صادق مٹھائی کو دیکھ کر فخر ہوا جو جی بی کی نمائندگی کررہے ہیں اور اس وقت مرکزی پروگرام منیجر کی حیثیت سے این سی اے آئی سے وابستہ ہیں۔ ڈاکٹر یاسر اور ٹیم نے جی بی کے لئے تحقیقاتی اور ترقی ، سرٹیفیکیشن ، ٹریننگ سے متعلق محکمہ ریونیو ، عدلیہ اور سیاحت سے متعلق دیگر اقدامات میں حقوق کے محصولات کے ریکارڈ کو ڈیجیٹلائزیشن کرنے کے لئے اے آئی سینٹر کے قیام کے سلسلے میں گلگت بلتستان کو اپنی خدمات فراہم کرنے میں گہری دلچسپی ظاہر کی اور بتایا کہ سماجی تحفظ کے لئے اس طرح کے اقدامات ، انتہائی اہم ہیں ، اے آئی کی اہمیت کو مدنظر رکھتے ہوئے۔ پاکستان کے تمام صوبوں نے ہنر مند افراد کو تیار کرنے اور ان کے مقامی مسائل کو اے آئی اور اس سے متعلقہ ٹیکنالوجیز کے ذریعے حل کرنے کے لئے اے آئی ریسرچ سنٹر کے قیام کیلئے اقدامات اٹھائے اب وقت آگیا ہے کہ گلگت بلتستان حکومت اس سمت پہلا اور اہم قدم اٹھائے اور اپنے مستقبل کے لئے اے آئی میں سرمایہ کاری شروع کرے اور پوری دنیا کا مقابلہ کرے۔
دورہ

شیئر کریں

Top