کراچی پاکستان سپر لیگ کا فاتح لاہور قلندرز ہاتھ ملتے رہ گئے

318894_3548764_updates.jpg

لاہور قلندرز کی ٹیم نے پہلے کھیلتے ہوئے مقررہ بیس اوورز میں سات وکٹوں کے نقصان پر 134رنز بنائے،بابر اعظم کی ذمہ دارانہ بیٹنگ سے کراچی کی ٹیم نے فائنل جیت لیا
کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک)شہر قائد میں کھیلے جا رہے پاکستان سپر لیگ کے فائنل میچ میں لاہور قلندرز نے ٹاس جیت کر کراچی کنگز کیخلاف پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا تھا۔بابر اعظم نے کی ذمہ دارانہ بلے بازی کرتے ہوئے لاہور قلندرز کے کسی بالرز کو پریشر ڈالنے کا موقع فراہم نہیں کیا اور تن تنہا میچ کو اختتام تک لے گئے۔بابر اعظم نے 49 گیندوں کا سامنا کرتے ہوئے 7 چوکوں کی مدد سے 63 رنز بنائے اور ناٹ آٹ رہے۔ یوں کراچی کنگز ان کی بلے بازی کی بدولت پاکستان سپر لیگ فائیو کا فاتح قرار پایا۔ لاہور قلندرز کی جانب سے حارث رف اور دلبر حسین نے دو، دو جبکہ سمت پٹیل نے ایک وکٹ حاصل کی۔لاہور قلندرز کی جانب سے دیئے گئے 135 رنز کا تعاقب کرنے کیلئے کراچی کنگز کی جانب سے شرجیل خان اور بابر اعظم میدان میں اترے۔ تاہم ٹیم کا سکور ابھی 23 تک ہی پہنچا تھا کہ شرجیل خان بانڈری کے قریب فخر زمان کو کیچ دے بیٹھے۔ انہوں نے 13 رنز بنائے اور سمت پٹیل کے حصے میں ان کی وکٹ آئی۔کراچی کنگز کی دوسری وکٹ 49 کے سکور پر گری جب دلبر حسین کی انتہائی شاندار گیند کو ایلکس ہیلز ٹھیک طرح سے سمجھ نہ سکے اور صرف گیارہ رنز بنا کر بولڈ ہو گئے۔کنگز کی جانب سے تیسرے آٹ ہونے والے کھلاڑی والٹن تھے۔ ان کی وکٹ بھی دلبر حسین کے حصے میں آئی، انہوں نے انھیں ایل بی ڈبلیو کیا۔ والٹن نے 22 رنز بنائے۔ تیسری وکٹ کے نقصان پر کراچی کنگز کا سکور 110 تھا۔ چوتھے آٹ ہونے والے کھلاڑی افتخار احمد تھے جنہوں نے صرف 4 رنز بنائے۔ اس کے فوری بعد ہی پانچویں وکٹ بھی گر گئی، آٹ ہونے والے کھلاڑی رتھرفورڈ تھے جو صفر پر آؤٹ ہوئے۔ٹاس جیتنے کے بعد لاہور قلندرز کی جانب سے تمیم اقبال اور فخر زمان میدان میں اترے اور پراعتماد طریقے سے بلے بازی کرتے ہوئے اپنی ٹیم کے سکور کو آگے بڑھایا۔دونوں کھلاڑیوں نے اپنی خوبصورت شارٹس کے ذریعے شائقین کرکٹ کو خوب محظوظ کیا۔ تاہم گیارہویں اوور میں تمیم اقبال کیچ دے بیٹھے۔ عمید آصف کی گیند پر افتخار احمد نے ان کا کیچ پکڑا۔ انہوں نے 38 گیندوں کا سامنا کرتے ہوئے چار چوکوں اور ایک چھکے کی مدد سے 35 رنز بنائے۔ اس کے فوری بعد اسی اوور میں فخر زمان بھی ایک اونچی شارٹ کھیلنے کی کوشش میں کیچ آٹ ہو گئے۔ عمید آصف کی گیند پر افتخار احمد نے ہی فخر زمان کا کیچ پکڑا۔ فخر زمان نے 24 گیندوں کا سامنا کرتے ہوئے چار چوکوں کی مدد سے 27 رنز بنائے۔اس کے بعد آنے والے سینئر بلے باز محمد حفیظ نے بھی انتہائی غیر ذمہ داری سے شارٹ کھیل کر اپنی وکٹ گنوا دی۔ کپتان عماد وسیم کی گیند پر بابر اعظم نے ان کا کیچ لیا۔ محمد حفیظ نے صرف دو رنز بنائے۔لاہور قلندرز کی چوتھی وکٹ 81 کے سکور پر گری جب سمت پٹیل نے بھی اپنا کیچ دیدیا۔ انہوں نے صرف پانچ رنز بنائے جبکہ ارشد اقبال کی گیند پر وقاص مقصود نے ان کا کیچ لیا۔اس کے بعد دبا میں کھیل رہے بین ڈنک نے بھی پویلین کی راہ لی۔ انہوں نے صرف گیارہ رنز بنائے۔ ارشد اقبال کی گیند پر بابر اعظم نے ان کا کیچ پکڑا۔ لاہور قلندرز کی پانچویں وکٹ 97 کے سکور پر گری۔قلندر نے 110 رنز پر اپنی چھٹی وکٹ گنوائی جب بانڈری کے قریب وقاص احمد نے کپتان سہیل اختر کا انتہائی خوبصورت کیچ پکڑا۔ یہ وکٹ وقاص مقصود کے حصے میں آئی جبکہ سہیل اختر نے 14 رنز بنائے۔ایک سو اٹھارہ پر ساتویں وکٹ گری اور آٹ ہونے والے کھلاڑی محمد فیضان تھے جنہوں نے کوئی رن نہیں بنایا۔ یہ وکٹ بھی وقاص مقصود کے حصے میں آئی اور افتخار احمد نے ہی کیچ لیا۔ڈی وائس اور شاہین شاہ آفریدی ناٹ آٹ رہے دونوں کھلاڑیوں نے بالترتیب 14 اور 12 رنز بنائے۔ لاہور قلندرز کی ٹیم نے پہلے کھیلتے ہوئے مقررہ بیس اوورز میں سات وکٹوں کے نقصان پر 134 رنز بنائے۔
سپر لیگ

شیئر کریں

Top