وفاق میں سلیکٹڈ کے جاتے ہی صوبائی حکومت کا خاتمہ یقینی ہوگا:حفیظ الرحمن

GB-CM.jpg

پانچ سال کے دوران کسی کو سیاسی رشوت کے طور پر سکیم نہیں دی، اپنے دورحکومت میں تمام اضلاع میں یکساں ترقیاتی کام کرائے، گلگت کی ترقی میں کچھ لوگوں کو تکلیف کیوں ہوتی ہے
میرے حلقے میں پری پول ریگنگ کے ساتھ پول ریگنگ بھی ہوئی ہے میرے چارسو پوسٹل بیلٹ پیپر غائب کردیئے گئے،موجودہ حکمرانوں کو معلوم ہی نہیں انھیں کرنا کیا ہے،بادشمال سے گفتگو
اسلام آباد (سپیشل رپورٹر) سابق وزیراعلیٰ حافظ حٖفیظ الرحمن نے بادشمال سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن نے گلگت بلتستان میں پانچ سال کے دوران کسی کو سیاسی رشوت کے طور پر سکیم نہیں دی ہے ہم نے اپنے دورحکومت میں تمام اضلاع میں یکساں ترقیاتی کام کرائے ہیں آخر گلگت کی ترقی میں کچھ لوگوں کو تکلیف کیوں ہوتی ہے عوامی مفاد عامہ کے ترقیاتی منصوبوں میں رکاوٹیں ڈالنے والے کھل کر سامنے آئیں سابق وزیراعلیٰ نے کہا کہ افسوس ہوتاہے کہ انجینئرنگ کالج کی بلڈنگ پر آگ لگانے کے واقعہ پراپوزیشن لیڈر نے مذمت تک نہیں کی اپوزیشن لیڈرکھل کران پلوں کی مخالفت کریں چھپ کر افسران کو دھکمیاں نہ دیں حکومت نے اگران پلوں کو تعمیری منصوبے کو ختم کرنے کی کوشش کی ان کا ڈٹ کرمقابلہ کریں گے سابق وزیراعلیٰ نے کہا کہ ہر ضلع میں پل تعمیر ہوئے ہیں آخر گلگت کے ساتھ کیوں دشمنی کی جارہی ہے کون لوگ ہیں جن کو گلگت سے دشمنی ہے ؟ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ گلگت بلتستان کے حالیہ انتخابات میں تاریخی دھاندلی کی گئی ہے جس کے شواہد کے ساتھ مسلم لیگ ن نے وائٹ پیپر جاری کیا ہے میرے حلقے میں پری پول ریگنگ کے ساتھ پول ریگنگ بھی ہوئی ہے میرے چارسو پوسٹل بیلٹ پیپر غائب کردئے گئے ہیں سیلکٹڈ حکومت کا خاتمہ ہونے کے بعد گلگت بلتستان میں اپوزیشن جماعتوں کے ساتھ ملکر موجودہ سلیکٹڈ حکومت کا بھی خاتمہ کریں گے انہوںنے کہا کہ سلیکٹڈ حکومت کو تختہ الٹنا کوئی غیر جمہوری اقدام نہیں ہے انہوں نے کہا کہ موجوہ سلیکٹڈ ٹولہ اسلام آباد میں اس لئے ڈیرے ڈال کربیٹھا ہے کہ انہیں عوام نے منتخب نہیں کیا ہے اگر یہ لوگ عوام سے منتخب ہوکر ایوان میں آتے تو آج یہ عوام کے درمیان ہوتے موجودہ حکمرانوںکو معلوم ہی نہیں ہے کہ انہوں نے کرنا ہی کیا ہے ۔
حفیظ الر حمن

شیئر کریں

Top