وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا انسٹیٹیوٹ آف ریجنل اسٹڈیز میں ای یو ڈس انفولیب رپورٹ بارے ویبینار سے خطا ب

243386_1713366_updates.jpg

ای یو ڈس انفولیب کی حالیہ تحقیقاتی رپورٹ نے ہندوستان کی جانب سے گذشتہ پندرہ سالوں میں پاکستان کو بدنام کرنے کی گھنانی سازش کو بے نقاب کیا ہے،رپورٹ میں واضح کیا گیا کہ کس طرح بھارت فرضی این جی اوز، جعلی ویب سائٹس اور حتی کہ مرے ہوئے لوگوں کو زندہ ظاہر کر کے جھوٹے پراپیگنڈا کے ذریعے پاکستان کو بین الاقوامی سطح پر بدنام کرنے کی مذموم سازش میں مصروف رہا ،یہ بھارتی نیٹ ورک برسلز اور جنیوا سمیت دنیا کے اہم شہروں میں پاکستان کے خلاف جھوٹے مواد کی تیاری کرتا رہا ہے

اسلام آباد(آئی این پی)وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ ای یو ڈس انفولیب کی حالیہ تحقیقاتی رپورٹ نے ہندوستان کی جانب سے گذشتہ پندرہ سالوں میں پاکستان کو بدنام کرنے کی گھنانی سازش کو بے نقاب کیا ہے ای یو ڈس انفولیب رپورٹ میں واضح کیا گیا ہے کہ کس طرح بھارت فرضی این جی اوز، جعلی ویب سائٹس اور حتی کہ مرے ہوئے لوگوں کو زندہ ظاہر کر کے جھوٹے پراپیگنڈا کے ذریعے پاکستان کو بین الاقوامی سطح پر بدنام کرنے کی مذموم سازش میں مصروف رہا ہے،یہ بھارتی نیٹ ورک برسلز اور جنیوا سمیت دنیا کے اہم شہروں میں پاکستان کے خلاف جھوٹے مواد کی تیاری کرتا رہا ہے پیر کو انسٹیٹیوٹ آف ریجنل اسٹڈیز اسلام آباد میں ای یو ڈس انفولیب رپورٹ کے حوالے سے منعقدہ ویبینار سے خطا ب کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ رپورٹ نے انکشاف کیا ہے کہ پاکستان کے خلاف اس غلط اور جھوٹی اطلاعات پر مبنی مواد کو بھارت کی سب سے بڑی نیوز ایجنسی اے این آئی کے ذریعے مشتہر کیا جاتا رہا – جہاں سے یہ جھوٹی خبریں دوسرے میڈیا ہاسز تک پہنچائی جاتیں،رپورٹ نے انکشاف کیا کہ اس ڈارک ویب کا سلسلہ 116ممالک تک پھیلا ہوا تھا10فرضی این جی اوز کو استعمال کیا گیاپورپی یونین اداروں کے نام جعلی طور پر استعمال کیے گئیفرضی جرنلسٹ کے نام استعمال کیے گئے ،ای یو ڈس انفولیب کی پہلی رپورٹ میں ای پی ٹو ڈے میگزین کا نام منظر عام پر آیا جو یورپی یونین کے میڈیا کے طور پر اپنی شناخت ظاہر کر رہا تھا اس ابتدائی رپورٹ کے بعد اس میگزین کو منظر عام سے ہٹا دیا گیا، جس کی ای یو کرونیکلز کے نام سے دوبارہ شائع ہونے کی اطلاعات ہیں،اس جعلی نیٹ ورک کو ہندوستان سے تعلق رکھنے والا سری واستوا گروپ چلا رہا تھا،رپورٹ کے مطابق یورپی یونین اور جنیوا میں مسٹر مادی شرما، وومن اکنامک اینڈ سوشل تھنک ٹینک کے نام سے اس نیٹ ورک کو چلانے میں متحرک تھا،پاکستان کے خلاف اس جھوٹے پرا پیگنڈے کو آگے پھیلانے کیلئے، ساؤتھ ایشیا ڈیموکریٹک فورم، انٹرنیشنل کونسل فار انٹر رلیجیس کوآپریشن (ICIRC)یورپین آرگنائزیشن فار پاکستانی مینارٹیز(EOPM)،ساؤتھ ایشیا پیس فورم، بلوچ فورم اور فرینڈز آف گلگت بلتستان جیسے فرضی پلیٹ فارمز تشکیل دیے گئے ،بین الاقوامی قوانین کے ماہر معروف امریکی پروفیسر لوئس بی سان، جو 2006میں انتقال کر چکے تھے ان کا نام استعمال کر کے، ان کی طرف سے ہیومن رائٹس کونسل 2007اور 2011کو امریکہ میں گلگت بلتستان کے حوالے سے منعقدہ تقریبات میں بھارتی موقف کی ترویج کی گئی ،یہ جعلی اطلاعات پر مبنی نیٹ ورک خواتین اور اقلیتوں کے حقوق کا نام استعمال کر کے،بعض یورپی ممبران پارلیمنٹ کو اپنے جال میں پھنساتا،مادی شرما اور سری وستوا گروپ نے بعض یورپی یونین پارلیمینٹیرینز کو پرائیویٹ طور پر مقبوضہ جموں و کشمیر ،بنگلہ دیش، اور مالدیپ کے دورے کروائے اور اسے سرکاری دورے ظاہر کیا اور ان کے ذاتی بیانات کو یورپی پارلیمنٹ اور یورپی یونین کے سرکاری موقف کے طور پر پیش کیا گیا، وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ اس رپورٹ سے یہ واضح ہوتا ہے کہ بھارت کی جانب سے پاکستان کو عالمی سطح پر رسوا کرنے کی یہ مہم لامتناہی ہے ،پاکستان کے خلاف اس جھوٹی عالمی سازش کے پس پردہ محرکات میں مقبوضہ جموں و کشمیر ،دہشتگردی ،ہیومن رائٹس اور فٹیف معاملات پر پاکستان کے امیج کو داغدار بنانا تھا،اقوام متحدہ کے موقر اور معتبر اداروں کا نام غلط طور پر استعمال کیا گیا،بھارت نے جھوٹے پروپیگنڈے کی تشہیر کے لئے تھنک ٹینکس، محققین اور طلبا کو استعمال کیا گیا جمہوری عمل میں بیرونی مداخلت سے متعلق یورپی یونین کی خصوصی کمیٹی کے 26جنوری 2021کو ہونے والے اجلاس میںای یو ڈس انفولیب کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر اور ایم ڈی نے آگاہ کیا کہ پاکستان کے خلاف ہیومن رائٹس کونسل اور جنیوا میں بیانات دلوانے کیلئے طلبا کو پیسوں سے بھرے سوٹ کیسز فراہم کیے گئے، ہم پاکستان کے خلاف ہندوستان کے اس جھوٹے بے بنیاد پراپیگنڈے سے عالمی برادری کو مسلسل باخبر رکھتے رہے، ہم نے پاکستان کے اندر دہشت گردی کی بھارتی منصوبہ بندی، پشت پناہی اور معاونت کے ناقابل تردید ثبوت ایک ڈوزئیر کے ذریعے دنیا بھر کے سامنے پیش کیے ہندوستانی جرنلسٹ ارناب گوسوامی کی منظر عام پر آنے والی وٹس ایپ چیٹ نے پاکستان کے خلاف بھارتی مذموم عزائم کو مزید بے نقاب کر دیا ہے، شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہم نے بین الاقوامی برادری سے مطالبہ کیا ہے کہ بھارت کی جانب سے پاکستان کو بین الاقوامی سطح پر بدنام کرنے کی اس منظم سازش کا نوٹس لے، میں نے یورپی یونین کے اعلی سطحی نمائندے کو بذریعہ خط اس صورت حال سے آگاہ کیا برسلز میں ہمارے سفیر یورپی اراکین پارلیمنٹ اور یورپی اداروں سے رابطہ کر کے انہیں ہندوستان کی اس سازش سے آگاہ کر رہے ہیں ہمارے اقوام متحدہ اور جنیوا میں تعینات مستقل مندوبین، ہیومن رائٹس مشینری کو ان بھارتی عزائم سے آگاہ کر رہے ہیں، سوئٹزرلینڈ اور بیلجیئم میں متعلقہ حکام سے رابطہ کر کے انہیں ان جعلی این جی اوز کے فنڈز اور ان کی ترسیلات کی تحقیقات کا مطالبہ کیا گیا ہے ،ہم عالمی برادری سے مطالبہ کرتے ہیں کہ خود ساختہ سب سے بڑی جمہوریت کے دعویدار بھارت کو مقبوضہ جموں و کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں ،اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں کے ساتھ ناروا سلوک، ہمسایوں کے ساتھ معاندانہ رویے، اور بین الاقوامی رائے عامہ کو بگاڑنے کے جرائم کا ذمہ دار ٹھہرایا جائے ،ہم عالمی برادری سے مطالبہ کرتے ہیں کہ بھارت کو پاکستان کے خلاف جھوٹے پروپیگنڈے کی تشہیر سے روکا جائے ،ہم اس وقت تک اپنی کاوشیں بروئے کار لاتے رہیں گے جب تک ہندوستان کو ان جرائم کا ذمہ دار نہیں ٹھہرایا جاتا۔

شیئر کریں

Top