چیئرمین سینیٹ کے الیکشن سے متعلق یوسف رضا گیلانی کی درخواست مسترد

ecp-approves-yousaf-raza-gillani-s-application-to-transfer-vote-to-islamabad-1613205685-6892.png

درخواست نہ قابل سماعت ہے اور نہ ہی نوٹس جاری کرنے کے لیے آرٹیکل 199 کے تحت اختیار کو استعمال کیا جاسکتا ہے، عدالت توقع کرتی ہے کہ منتخب نمائندگان پارلیمان کے وقار اور خودمختاری کو برقرار رکھیں گے ، سیاسی قیادت عدالتوں کو ایسے معاملات میں ملوث کیے بغیر تنازعات کا حل نکالنے کے لیے کوشش کرے ،چیف جسٹس اطہر من اللہ نے 12صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ بھی جاری کر دیا
اسلام آباد(آئی این پی) اسلام آبادہائی کورٹ نے چیئرمین سینیٹ الیکشن کے خلاف درخواست ناقابل سماعت قرار دے کر خارج کر دی۔چیف جسٹس اطہر من اللہ نے چیئرمین سینٹ الیکشن کے خلاف درخواست ناقابل سماعت قرار دینے کا 12صفحات پر مشتمل تحریری فیصلہ بھی جاری کر دیا جس میں کہا گیا ہے کہ درخواست نہ قابل سماعت ہے اور نہ ہی نوٹس جاری کرنے کے لیے آرٹیکل 199 کے تحت اختیار کو استعمال کیا جاسکتا ہے۔عدالت توقع کرتی ہے کہ منتخب نمائندگان پارلیمان کے وقار اور خودمختاری کو برقرار رکھیں گے۔فیصلے میں کہا گیا ہے کہ سیاسی قیادت عدالتوں کو ایسے معاملات میں ملوث کیے بغیر تنازعات کا حل نکالنے کے لیے کوشش کرے،آئین میں دیے گئے اختیارات اور استحقاق کا استعمال کرتے ہوئے سیاسی قیادت تنازعات کا حل کرے۔جاری کردہ فیصلے میں کہا گیا ہے کہ درخواست گزار کے مطابق پی ڈی ایم کے پاس چیئرمین سینٹ کے لیے اکثریت موجود ہے۔اگر اکثریت موجود ہے توپی ڈی ایم نہ صرف چیئرمین سینیٹ کو ہٹا سکتی ہے بلکہ یوسف رضاگیلانی کو چیئرمین سینیٹ بنا بھی سکتی ہے۔چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ نے فیصلے میں مزید کہا ہے کہ سینیٹ کے سات ارکان کی جانب سے آئینی طریقہ استعمال کرنے پر پارلیمان کی عزت اور خودمختاری میں اضافہ ہوگا۔عدالت مطمئن ہے کہ آئینی طریقہ کار کے استعمال سے واضح ہوجائے گا کہ ان سات سینیٹرز نے آپ کو ووٹ دیا تھا۔ یہ عدالت پارلیمان کے استحقاق سے متعلق آئین کے آرٹیکل 69 کے تحت تحمل کا مظاہرہ کررہی ہے۔قبل ازیں چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ جسٹس اطہر من اللہ نے چیئرمین سینیٹ الیکشن میں صادق سنجرانی کی کامیابی کے فیصلے کے خلاف یوسف رضا گیلانی کی درخواست پر سماعت کی۔یوسف رضا گیلانی کے وکیل فاروق ایچ نائیک نے موقف اختیار کیا کہ صدر مملکت نے چیئرمین سینیٹ الیکشن کے لئے جی ڈی اے کے سینیٹر مظفر حسین شاہ کو الیکشن میں پریذائیڈنگ افسر مقرر کیا۔ شیری رحمان، سعید غنی اور میں نے بیان حلفی عدالت میں دیا ہے کہ سیکرٹری سینیٹ نے خانے کے اندر کہیں بھی مہر لگانے کا کہا تھا اور سیکرٹری سینیٹ کے کہنے کے بعد ہم نے اپنے سینیٹرز کو کہیں بھی مہر لگانے کا کہا۔ پریزائیڈنگ آفیسر نے خانے کے اندر نام پر مہر لگانے پر ووٹ مسترد کئے، الیکشن میں صادق سنجرانی کو چیئرمین سینیٹ قرار دیا گیا، اور 7 ووٹوں کو مسترد کر کے یوسف رضا گیلانی کے ہارنے کا اعلان کر دیا۔فاروق ایچ نائیک نے مزید کہا کہ چیئرمین سینیٹ الیکشن میں الیکشن کمیشن کا کوئی کردار نہیں۔ اگر طریقہ کار میں کوئی بے ضابطگی ہو تو وہ عدالت میں چیلنج نہیں کی جا سکتی۔ رولز میں بیلٹ پیپر یا ووٹ سے متعلق کچھ نہیں، رولز اس حوالے سے خاموش ہیں۔ یوسف رضا گیلانی کو الیکشن کے روز بھی اور آج بھی سینیٹ میں اکثریت حاصل ہے۔چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ پارلیمان کی اندرونی کارروائی کے استحقاق کے آئین آرٹیکل 69 سے کیسے نکلیں گے ؟ پارلیمان کی اندرونی کارروائی عدالت میں چیلنج کی جاسکتی ہے؟، اگر یوسف گیلانی کے پاس اکثریت ہے تو وہ صادق سنجرانی کو ہٹا سکتے ہیں، پارلیمنٹ بڑے مسائل کو حل کرنے کیلئے ہے، کیا اپنا مسئلہ حل نہیں کرسکتے؟ کیا عدالت کو پارلیمانی مسائل میں مداخلت کرنی چاہیے؟۔اسلام آباد ہائی کورٹ نے دلائل سننے کے بعد یوسف رضا گیلانی کی درخواست ناقابل سماعت قرار دے کر خارج کردی۔

شیئر کریں

Top