موجودہ حکومت نے پہلی مرتبہ زرعی شعبے کی بہتری کے لئے اقدامات کئے ہیں، سینیٹر اعجاز چوہدری

Ejaz-Chaudry.jpg

ماضی میں زرعی شعبے کو نظر انداز کیا گیا، نیا پاکستان ہاوسنگ سکیم بے گھر افراد کو گھر فراہم کرنے کے لئے بہترین سکیم ہے، وزیراعظم عمران خان نے وزیراعظم ہاوس اور وزیراعظم آفس کے اخراجات میں کفایت شعاری کے ذریعے خطیر رقم کی بچت کی ہے
پاکستان تحریک انصاف کے سینیٹر اعجاز چوہدری کی ایوان بالا کے اجلاس میں آئندہ مالی سال 2021۔22ء کے بجٹ پر بحث
اسلام آباد(آئی این پی ) پاکستان تحریک انصاف کے سینیٹر اعجاز چوہدری نے کہا کہ موجودہ حکومت نے پہلی مرتبہ زرعی شعبے کی بہتری کے لئے اقدامات کئے ہیں، ماضی میں زرعی شعبے کو نظر انداز کیا گیا، نیا پاکستان ہاوسنگ سکیم بے گھر افراد کو گھر فراہم کرنے کے لئے بہترین سکیم ہے، وزیراعظم عمران خان نے وزیراعظم ہاوس اور وزیراعظم آفس کے اخراجات میں کفایت شعاری کے ذریعے خطیر رقم کی بچت کی ہے۔ جمعہ کو ایوان بالا کے اجلاس میں آئندہ مالی سال 2021۔22ء کے بجٹ پر بحث میں حصہ لیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ملک کی 65 سے 70 فیصد آبادی زراعت سے وابستہ ہے، سابق حکومتوں نے زرعی شعبے اور اصلاحات پر کوئی توجہ نہیں دی، موجودہ حکومت کے اقدامات کے باعث تین سال میں کسان کو ہر فصل میں منافع ہے، اب 90 فیصد کسان بلا سود قرضہ حاصل کر سکیں گے، ٹریکٹر اور دیگر زرعی آلات پر بھی بلا سود قرضہ فراہم کیا جا رہا ہے، کسانوں کو ان کی فصل کے بہتر معاوضے اور اسے محفوظ بنانے کے لئے کمیونٹی سٹوریج کاتصور پیش کیا گیا ہے، بجٹ میں 12 ارب روپے زرعی ضروریات کے لئے رکھے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نیا پاکستان ہا?سنگ سکیم بے گھر افراد کو چھت فراہم کرنے کا منصوبہ ہے جس میں 300 ارب روپے کی سرمایہ کاری ہو گی اور 20 لاکھ روپے قرضہ 3 سے 5 فیصد کی شرح پر حاصل کیا جا سکتا ہے، تین لاکھ روپے حکومت سبسڈی دے گی، پیپلزپارٹی نے 35 سال پہلے 50 کروڑ روپے کی لاگت سے ہاوسنگ سکیم شروع کی تھی اور اس سکیم کے تحت دیئے جانے والے قرضے بھوت بنگلے بن چکے ہیں، ان 50 کروڑ روپے کا حساب کون دے گا۔۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی 22 کروڑ آبادی میں صرف 29 لاکھ افراد ٹیکس گوشوارے جمع کراتے ہیں، کوئی اسسٹنٹ کمشنر کسی تاجر کو گرفتار نہیں کر سکے گا، ہم ٹیکس نظام میں تبدیلی لائے ہیں، قائداعظم نے فلاحی ریاست کا تصور پیش کیا تھا، وزیراعظم عمران خان نے ریاست مدینہ کی طرز پر ریاست قائم کرنے کا عزم ظاہر کیا ہے، 2018ئمیں وزیراعظم ہا?س کے اخراجات کے مقابلے میں وزیراعظم عمران خان نے 49 فیصد اور وزیراعظم آفس کے اخراجات میں 29 فیصد کمی کی ہے، مسلم لیگ (ن) اور پیپلزپارٹی کے دور میں صدراور وزیراعظم کے کیمپ آفسز پر اربوں روپے خرچ کئے گئے، موجودہ حکومت نے یہ تمام کیمپ آفسز ختم کر دیئے گئے ہیں، معیشت کی بہتری کے لئے حکومتی اقدامات کے مثبت نتائج سامنے آ رہے ہیں، پاکستان کی معیشت ترقی کر رہی ہے اور ہر شعبے میں رواں مالی سال کے دوران مزید بہتری ہو گی۔

شیئر کریں

Top