عالمی ادارہ صحت نے چین کوباضابطہ طورپرملیریا سے پاک قرار دے دیا

who-twitter-630x420-1.jpg

جنیوا(شِنہوا)عالمی ادارہ صحت(ڈبلیو ایچ او) نے ملیریا کیخلاف 70 سال کی جدوجہد کے بعد چین کو اس مرض کے کامیابی سے خاتمے کے جشن کے طور پر بدھ کے روز باضابطہ طور پر ملیریا سے پاک ہونے کی سند دے دی ہے۔عالمی ادارہ صحت نے کہا ہے کہ چین نے گزشتہ دہائیوں کے دوران ملیریا کے کیسز کی تعداد 1940میں ر پورٹ ہو نے والے 3 کروڑ کیسز سے کم کی ہے اور گز شتہ 4سال میں آخر کار کوئی کیس سامنے نہیں آیا۔عالمی ادارہ صحت کے ڈائریکٹر جنرل ٹیڈروس ادھانوم گبریسیس نے کہاکہ آج ہم ملیریا سے چھٹکارا حاصل کرنے پر چینی عوام کو مبارکباد پیش کرتے ہیں۔گبریسیس نے مزید کہاکہ انہوں نے بڑی مشکل سے کامیابی حاصل کی اور یہ دہائیوں کے اہداف اور مستقل کوششوں کے بعد ملی ہے۔ملیریا کیخلاف چینی کوششیں 1950کی دہائی میں شروع کی گئیں ، یہ بیماری ملک کے جنوبی علاقے میں حد سے زیادہ تھی جو کہ مین لینڈ جنوب مشرقی ایشیا میں دیگر زیادہ بیماری والے علاقوں کے قریب تھی۔ڈبلیو ایچ او کے مطابق 1967میں تحقیقاتی پروگرام “523منصوبہ” شروع کیا گیا جس نے چینی نوبل انعام یافتہ تو یو یو کو آرٹیمیسی نین دریافت کرنے کے قابل بنایا جوکہ آج کل ملیریا کیخلاف موثر ترین دوا ہے۔گزشتہ2دہائیوں کے دوران چین نے اپنی کوششوں میں اضافہ کیا اور عملے کو تربیت ،لیبارٹری آلات، انسداد ملیریا ادویات اور مچھروں کی افزائش پر قابو پانے کے نئے طریقے فراہم کرکے کیسز کی 1990 کی دہائی میں سالانہ تعداد 1لاکھ17ہزار سے کم کرکے 5ہزارکردی۔کیس کو ایک دن میں رپورٹ کرنے،3 روز میں ایک کیس کی تصدیق کرنے اور 7 روز میں بیماری کے مزید پھیلا کی روک تھام بارے “7-3-1” کی حکمت عملی بھی کامیابی کی ایک کنجی ہے اور یہ ملیریا سے متاثرہ ممالک سے آنے والے مسافروں کیلئے اب بھی استعمال کی جاتی ہے۔چین میں گزشتہ 4 سالوں میں کوئی کیس رپورٹ نہ ہونا ڈبلیو ایچ اوکی جانب سے ملیریا سے پاک ہونے کی سند کی ضمانت ہے۔

شیئر کریں

Top