بجلی کی قیمت میں ایک بار پھر 92 پیسہ فی یونٹ اضافے کا امکان

Electric-city.jpg

قیمتوں میں اضافے کے بعد صارفین پر 9 ارب روپے سے زائد کا اضافی بوجھ پڑے گا
اسلام آباد(آئی این پی ) سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی نے بجلی کی قیمتوں میں 92 پیسہ فی یونٹ اضافے کی درخواست کر دی ،قیمتوں میں اضافے کے بعد صارفین پر 9 ارب روپے سے زائد کا اضافی بوجھ پڑے گا۔ تفصیلات کے مطابق حکومت نے عوام پر ایک بار پھر بجلی بم گرانے کا فیصلہ کیا ہے، اور سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی(سی پی پی اے) نے نیپرا میں درخواست جمع کروادی ہے، جس کے بعد بجلی کی قیمتوں میں 92 پیسہ فی یونٹ اضافے کا امکان ہے۔ سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی (سی پی پی اے) کے مطابق بجلی کی قیمتوں میں اضافہ ماہانہ فیول ایڈجسٹمنٹ کی مد میں کیاجارہا ہے، سی پی پی اے نے درخواست کی ہے کہ جنوری میں 7 ارب 72 کروڑیونٹ بجلی پیدا ہوئی، بجلی کی پیداواری لاگت 51 ارب 66 کروڑرہی، بجلی کی پیداوارپرفیول لاگت کا تخمینہ 5 روپے 75 پیسے فی یونٹ لگایا گیا تھا، جنوری میں فیول لاگٹ 6 روپے 68 پیسے فی یونٹ رہی، 18 روپے 94 پیسے فی یونٹ مہنگی ترین بجلی ڈیزل سے پیدا کی گئی، فرنس آئل سے 12 روپے 34 پیسے فی یونٹ بجلی پیدا ہوئی، ایل این جی سے 8 روپے اورقدرتی گیس سے 7 روپے فی یونٹ بجلی پیدا ہوئی، 27 پیسے فی یونٹ بجلی لائن لاسزکی نذرہوگئی۔نیپرا بجلی کی قیمتوں میں اضافہ سے متعلق درخواست پر25 فروری کوسماعت کریگا، اور منظوری کی صورت میں صارفین پر9 ارب روپیسیزائد کا اضافی بوجھ پڑے گا۔

شیئر کریں

Top