جامعہ کراچی خودکش حملے میں ملوث کالعدم تنظیم کا اہم دہشت گرد گرفتار

5-1.jpg

کراچی: قانون نافذ کرنے والے ادارے نے جامعہ کراچی خودکش حملہ کیس کے سلسلے میں کالعدم قوم پرست تنظیم کے اہم دہشت گرد کو گرفتار کرلیا۔
ذرائع کے مطابق گرفتار دہشت گرد کا جامعہ کراچی میں چینی اساتذہ کی وین کو خودکش حملے کا نشانہ بنانے والی خاتون شاری بلوچ کے شوہر ہیبتان بلوچ سے رابطہ بتایا جاتا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ گرفتار دہشت گرد بلوچستان میں سکیورٹی فورسز کو نشانہ بنانے کے علاوہ گلبائی میں چینی انجینئرز کو بھی فائرنگ کا نشانہ بنانے میں ملوث رہا ہے۔
ذرائع کے مطابق گرفتار دہشت گرد نے بارودی مواد اور بم بنانے کی تربیت بھی حاصل کی ہوئی ہے۔
گرفتاری کے بعد اس حوالے سے پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر اطلاعات سندھ شرجیل انعام میمن نے کہا ہے کہ کراچی یونیورسٹی میں ہونے والا حملہ خودکش تھا جس میں ایک خاتون ملوث تھی، کیس کی تمام اداروں نے ملک کر تفتیش کی، چوتھے دہشت گرد کی شناخت کرنے میں کامیاب ہوئے ہیں جسے گرفتار کرلیا گیا ہے۔
انہوں نے بتایا کہ کالعدم بی ایل ای نے حملے کی ذمے داری قبول کی جس کے بعد کالعدم بی ایل اے کے کمانڈر کو کارروائی میں گرفتار کیا گیا، دہشت گرد حملے کے بعد بلوچستان بھاگ گیا تھا، حملے کا ماسٹر مائنڈ پڑوسی ملک کے ذریعے پاکستان میں داخل ہوا، گرفتار دہشت گرد سلیپر سیل کا کمانڈر ہے۔

شیئر کریں

Top